logo logo
  • تاریخ انتشار:‌ 1395/10/12 - 12:00 ق.ظ
  • چاپ
ٹرمپ انتظامیہ ایران جوہری معاہدے کو نظراندازی نہیں کرسکتی: چینی نیوز ایجنسی

ٹرمپ انتظامیہ ایران جوہری معاہدے کو نظراندازی نہیں کرسکتی: چینی نیوز ایجنسی

ٹرمپ انتظامیہ ایران جوہری معاہدے کو نظراندازی نہیں کرسکتی: چینی نیوز ایجنسی

چین کے قومی خبررساں ادارے نے اپنی ایک تجزیاتی رپورٹ میں کہا ہے کہ ایران اور گروپ 1+5 کے درمیان وجود پانے والا جوہری معاہدہ اور اس کے نفاذ کو کسی بھی امریکی حکومت بالخصوص نومنتخب صدر 'ڈونلڈ ٹرمپ' کی انتظامیہ کی طرف سے نظرانداز نہیں کیا جاسکتا.

چینی نیوز ایجنسی، 'ژنہوا' نے ہفتے كے روز اپنی ایك رپورٹ میں كہا كہ امریكہ اس وقت اس پوزیشن میں نہیں كہ تاریخی جوہری معاہدے كو پس پشت ڈالے اور اگر نئی امریكی حكومت اس معاہدے كو ختم كرنا بھی چاہئے تو اسے اس كی جگہ كوئی اور معاہدہ كرنا پڑے گا جس كے تحت تمام فریقین كے مفادات كو اہمیت دینی ہوگی.

اس رپورٹ میں عالمی تجزیہ نگاروں كے حوالے سے مزید بتایا گیا ہے كہ موجودہ امریكی صورتحال اسے اجازت نہیں دے گی كہ وہ ایران جوہری معاہدے كو نظرانداز كرے.

شن ہوا كے مطابق، ٹرمپ انتظامیہ كے پاس ایران جوہری معاہدے سے بہتر معاہدہ ہونا چاہئے مگر ان حالات میں جوہری معاہدے سے بہتر كوئی اور آپشن سامنے نہیں ہے.

اس رپورٹ میں كہا گیا ہے كہ حالات كو دیكھتے ہوئے یہ بات پتہ چلتی ہے كہ ٹرمپ انتظامیہ كی جانب سے ایران جوہری معاہدے كو توڑنے كا كوئی امكان نہیں بلكہ امریكہ كے پاس جوہری معاہدے پر عمل كرنے كے سوا كوئی اور آپشن نہیں ہے.

چینی نیوز ایجنسی نے نومنتخب امریكی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور صہیونی لابی بالخصوص نیتن یاہو كے قریبی تعلقات كا ذكر كرتے ہوئے مزید كہا كہ اسرائیل میں بھی اكثریت اس بات پر متفق ہیں كہ ایران جوہری معاہدہ اس میں شامل تمام فریقین كے لئے ایك تعمیری مفاہمت ہے.

مطالب مشابه