ستاد مرکزی اربعین|کمیته فرهنگی، آموزشی

banner-img banner-img-en
logo

  ادعیه و زیارات


نورانی گنبد

چاپ
نورانی گنبد

 

39. مفضل بن عمر راوی ہیں کہ امام صادق ؑ نے فرمایا: خدا کی قسم گویا میں فرشتوں کو دیکھ رہا ہوں جو قبر امام حسین ؑ کے پاس ہیں اور با ایمان زائرین کے لئے ازدہام کا سبب ہیں میں نے عرض کیا : زائرین فرشتوں کو دیکھیں گے ،  امام نے فرمایا: بالکل نہیں،بالکل نہیں ۔ لیکن فرشتے مومنین سے اتنے نزدیک ہوں گے کہ ان کے سر و صورت پر ہاتھ پھیریں گے ۔

خدا ہر صبح و شام زائرین امام حسین ؑ کے لئے جنتی کھانے بھیجتا ہے اور فرشتے ان کے خدمت گذار ہیں اور جو بھی زائر خدا سے اپنی دینی اور دنیوی حاجت طلب کرے خدا اسے عطا کرے گا۔

میں نے عرض کیا : خدا کی قسم یہ عظمت و کرامت بہت عظیم ہے ۔

امام نے مجھ سے فرمایا: اے مفضل کیا تم چاہتے ہو کہ اس سے زیادہ بیان کروں ؟

میں نے عرض کیا: ہاں میرے مولا و آقا۔

امام نے فرمایا : گویا میں دیکھ رہا ہوں کہ نور کا ایک تخت رکھا گیا ہے اور اس پر یاقوت کی چھت ہے جس میں جواہرات جڑے ہوئے ہیں گویا امام حسین ؑ کو دیکھ رہا ہوں کہ اس پر تشریف فرما ہیں اور آپ کے چاہنے والے ۹۰ہزار اس سبز گنبد کے نیچے موجود ہیں اور مومنین کو دیکھ رہا ہوں کہ امام حسین ؑ کی زیارت کررہے ہیں اور ان پر سلام بھیج رہے ہیں اور خداوند تعالی اس عالم انہیں فرما رہا ہے میرے چاہنے والو مجھ سے کچھ سوال کرو ۔ تم نے بہت مصیبتیں جھیلی ہیں اور ذلیل و رسوا ہوئے ہو اور ستم سہا ہے اور آج وہ دن ہے کہ تم اپنی دنیوی اور اخروی حاجت طلب کرو تمہیں عطا کیا جائے گا۔ ان زائرین کا کھانا جنت سے ہوگا اور یہ وہ کرامت ہے جو ختم نہیں ہوگی اور اس کا اختتام قابل تصور نہیں ہے [1]۔

 

[1]. باب 50، حدیث 3.

 عضویت در کانال آموزش و فرهنگ اربعین

چاپ

برچسب ها: کامل الزیارات۔ حدیث، امام حسین علیہ السلام

نظرات


ارسال نظر


Arbaeentitr

 فعالیت ها و برنامه ها

 احادیث

 ادعیه و زیارات