ستاد مرکزی اربعین|کمیته فرهنگی، آموزشی

banner-img banner-img-en
logo

 ادبیات و پژوهش


الحسن و الحسين عليهما السلام هما ريحانتاي من الدنيا

چاپ
الحسن و الحسين عليهما السلام هما ريحانتاي من الدنيا

فصل : 7

الحسن و الحسين عليهما السلام هما ريحانتاي من الدنيا

(حسنین کریمین علیہما السلام ہی میرے گلشن دُنیا کے پھول ہیں)

21. عن ابن ابي نعم : سمعت عبداﷲ ابن عمر رضي اﷲ عنهما و سأله عن المحرم، قال شعبة : أحسبه بقتل الذباب، فقال : أهل العراق يسألون عن الذباب و قد قتلوا ابن ابنة رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، و قال النبي صلي الله عليه وآله وسلم : هما ريحا نتاي من الدنيا.
’’ابن ابونعم فرماتے ہیں کہ کسی نے حضرت عبداﷲ بن عمر رضی اﷲ عنہما سے حالت احرام کے متعلق دریافت کیا۔ شعبہ فرماتے ہیں کہ میرے خیال میں (محرم کے) مکھی مارنے کے بارے میں پوچھا تھا۔ حضرت ابن عمر رضی اﷲ عنہما نے فرمایا : اہل عراق مکھی مارنے کا حکم پوچھتے ہیں حالانکہ انہوں نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے نواسے (حسین) کو شہید کر دیا تھا اور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہے : وہ دونوں (حسن و حسین علیہما السلام) ہی تو میرے گلشن دُنیا کے دو پھول ہیں۔‘‘
1. بخاري، الصحيح، 3 : 1371، کتاب فضائل الصحابه، رقم : 3543
2. احمد بن حنبل، المسند، 2 : 85، رقم : 5568
3. ابن حبان، الصحيح، 15 : 425، رقم : 6969
4. طيالسي، المسند، 1 : 260، رقم : 1927
5. ابونعيم اصبهاني، حلية الاولياء و طبقات الاصفياء، 5 : 70
6. ابونعيم اصبهاني، حلية الاولياء و طبقات الاصفياء، 7 : 168
7. بيهقي، المدخل، 1 : 54، رقم : 129

22. عن عبدالرحمن بن ابی نعم : أن رجلا من أهل العراق سأل ابن عمر رضي اﷲ عنهما عن دم البعوض يصيب الثوب؟ فقال ابن عمر رضي اﷲ عنهما : انظروا إلي هذا يسأل عن دم البعوض و قد قتلوا ابن رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم، و سمعت رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم يقول : ان الحسن و الحسين هما ريحانتي من الدنيا.
’’حضرت عبدالرحمن بن ابی نعم سے روایت ہے کہ ایک عراقی نے حضرت عبداﷲ بن عمر رضی اﷲ عنہما سے پوچھا کہ کپڑے پر مچھر کا خون لگ جائے تو کیا حکم ہے؟ حضرت عبداﷲ بن عمر رضی اﷲ عنہما نے فرمایا : اس کی طرف دیکھو، مچھر کے خون کا مسئلہ پوچھتا ہے حالانکہ انہوں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے بیٹے (حسینں) کو شہید کیا ہے اور میں نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا : حسن اور حسین ہی تو میرے گلشن دُنیا کے دو پھول ہیں۔‘‘
1. ترمذي، الجامع الصحيح، 5 : 657، ابواب المناقب، رقم : 3770
2. بخاري، الصحيح، 5 : 2234، کتاب الادب، رقم : 5648
3. نسائي، السنن الکبریٰ، 5 : 50، رقم : 8530
4. احمد بن حنبل، المسند، 2 : 93، رقم : 5675
5. احمد بن حنبل، المسند، 2 : 114، رقم : 5940
6. ابو يعلیٰ، المسند، 10 : 106، رقم : 5739
7. طبراني، المعجم الکبير، 3 : 127، رقم : 2884
8. حکمي، معارج القبول، 3 : 1201

23. عن أبي أيوب الأنصاري رضی اﷲ عنه قال : دخلت علي رسول اﷲ صلي الله عليه وآله وسلم والحسن والحسين عليهما السلام يلعبان بين يديه أو في حجره، فقلت : يا رسول اﷲ صلي اﷲ عليک وسلم أتحبهما؟ فقال : و کيف لا أحبهما وهما ريحانتي من الدنيا أشمهما.
’’حضرت ایوب انصاری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ اقدس میں حاضر ہوا تو (دیکھا کہ) حسن و حسین علیہما السلام آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے سامنے یا گود میں کھیل رہے تھے۔ میں نے عرض کیا : یا رسول اﷲ صلی اﷲ علیک وسلم : کیا آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ان سے محبت کرتے ہیں؟ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : میں ان سے محبت کیوں نہ کروں حالانکہ میرے گلشن دُنیا کے یہی تو دو پھول ہیں جن کی مہک کو سونگھتا رہتا ہوں (اُنہی پھولوں کی خوشبو سے کیف و سرور پاتا ہوں)۔‘‘
1. طبراني، المعجم الکبير، 4 : 155، رقم : 3990
2. هيثمي، مجمع الزوائد، 9 : 181
3. عسقلاني، فتح الباري، 7 : 99
4. مبارکپوري، تحفة الأحوذي، 6 : 32
5. ذهبي، سير أعلام النبلاء، 3 : 282



منابع: . طبراني، المعجم الکبير، 4 : 155، رقم : 3990 2. هيثمي، مجمع الزوائد، 9 : 181 3. عسقلاني، فتح الباري، 7 : 99 4. مبارکپوري، تحفة الأحوذي، 6 : 32 5. ذهبي، سير أعلام النبلاء، 3 : 282
ارسال کننده: مدیر پورتال
 عضویت در کانال آموزش و فرهنگ اربعین

چاپ

برچسب ها امام حسن۔ مرج البحرین۔ زندگی نامہ امام حسن مجتبی

نظرات


ارسال نظر


Arbaeentitr

 فعالیت ها و برنامه ها

 احادیث

 ادعیه و زیارات