ستاد مرکزی اربعین|کمیته فرهنگی، آموزشی

banner-img banner-img-en
logo

 ادبیات و پژوهش


تحریک حسینی میں خواتین کا کردار

چاپ
تحریک حسینی میں خواتین کا کردار

السّلام علیک یا ابا عبداللہ السّلام علیک یا زینب بنت ولیّ اللہ

 

سید الشہداء علیہ السّلام  کی تحریک کو کامیابی سے ہمکنار اور کامل کرنے میں خاندان عصمت و طہارت کی  عظیم خواتین نے اہم کردار ادا کیا؛انھوں نےلوگوں کو خواب غفلت سے بیدار کیا اور اموی حکومت کی ہیبت کا خاتمہ کر کے اس حکومت کے خلاف قیام کرنے والوں کے لئے راستہ ہموار کردیا کہ اگر وہ نہ ہوتیں تو کسی میں اس فاسق وفاجرحکومت کے خلاف زبان پر ایک کلمہ جاری کرنے کی بھی جرات نہ ہوتی۔

کربلا میں بچوں اور خواتین کے موجود ہونے نے کربلا کے منظر کو بہت پرکشش بنا دیا تھا درحقیقت  یہ مبلغین کا ایک گروہ تھا جسے اما م حسین علیہ السّلام  اپنے ہمراہ لے کر گئے تھے تاکہ اپنی شہادت کے بعد ان مبلغین کو دشمن کے ہاتھوں ان کے مرکز شام روانہ کریں اور یہ خود ایک عجیب تکنیک اور ایک غیر معمولی اقدام تھا جو امام علیہ السّلام نے اٹھایاتاکہ اس طرح اپنے قیام کی آواز کو پوری دنیا تک پھیلا سکیں اور ان کی آواز زمان ومکان کو چیرتی ہوئی ظالم و جابر حکومت کے ستونوں کو ہلا کر رکھ دے اور کسی میں یہ جرات پیدا نہ ہو کہ وہ یزید کے ناشائستہ اور اسلام مخالف اقدامات کا دفاع کرسکے ۔

اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ اگر نواسہ رسولؐ اور ان کےاصحاب شہید کردیے جاتےاور اس وقت خاندان وحی کی خواتین[جن میں سیدہ زینب سلام اللہ علیہا سر فہرست تھیں]اس ظالم و جابر اور طاغوت صفت لشکر کا مقابلہ نہ کرتیں تو نواسہ رسولؐ کی شہادت رائیگاں چلی جاتی اور کوئی ایک فرد بھی ان کے خون کا انتقام لینے کے لیے  کھڑانہ  ہوتا ۔ امام حسین علیہ السّلام  یہ جانتے تھے کہ ان خواتین کے سوا کسی میں اس کام کے انجام دینے کی سکت نہیں ہے اور خاندان عصمت و طہارت کو کربلا ہمراہ لے جانے کا فلسفہ بھی یہی تھا تاکہ نہ صرف  یہ کہ یتیم  بچے اور خواتین اسیر ہوکر مظلوم قرار پائیں بلکہ اس سیاسی مقصد اور ایک عمیق مکتب فکر کی بنیاد ڈالنے میں مددگار ثابت ہوں جس کی خاطر مظلوم کربلا نے یہ قیام کیا تھا۔

  اس دور میں بھی مظلوم کربلا کی چاہنے والی خواتین  کربلا کی شیر دل خاتون سیدہ زینب سلام اللہ علیہا کی سیرت پر عمل پیرا ہوکر کربلا کے اس پیغام کو آئندہ آنے والی نسلوں تک منتقل کرنے میں مسلسل مشغول ہیں اور اسے اپنی ذمہ داری سمجھ کرانجام دے رہی ہیں ۔یہی چہلم امام حسین علیہ السّلام جو مقصد  کربلا کو زندہ رکھنے کا ایک  بہترین طریقہ ہے اس میں بھی ہرسال خواتین برابر کی شریک ہو کر شہزادی زینب سلام اللہ علیہا اور ان کی مادر گرامی حضرت زہراءسلام اللہ علیہا کی خوشنودی حاصل کرتی ہیں۔ خداوندمتعال ہمیں اور تمام ماں بہنوں کو چہلم امام حسین علیہ السّلام کے سلسلہ میں نجف اشرف سے کربلا معلّٰی کی جانب پیدل روانہ ہونے والے جلوسوں میں شرکت کی توفیق عطا فرمائے جو نورانیت ومعنویت اور اخلاص ان جلوسوں میں پایا جاتا ہے اسے کبھی فراموش نہیں کرسکتی۔ 



منابع: مجلہ ندائے اسلام
ارسال کننده: مدیر پورتال
 عضویت در کانال آموزش و فرهنگ اربعین

چاپ

برچسب ها تحریک حسینی میں خواتین کا کردار۔ خواتین کربلا۔ کربلا۔ امام حسین۔ جناب زینب۔ جناب ام کلثوم

نظرات


ارسال نظر


Arbaeentitr

 فعالیت ها و برنامه ها

 احادیث

 ادعیه و زیارات