ستاد مرکزی اربعین|کمیته فرهنگی، آموزشی

banner-img banner-img-en
logo

 ادبیات و پژوهش


خیام حسینی کی غارتگری

چاپ
خیام حسینی کی غارتگری

خاندان رسالت اور نور چشم زہرا ؑکے اموال کی غارت گری کے لئے دشمنوں نے خیموں پر یلغار کی ،خواتین نے جو پٹکے باندھ رکھے تھے اسے بھی لوٹ لیا خواتین و بنات رسول اللہ کو خیموں سے باہر نکال دیا وہ سب ایک ساتھ گریہ کناں اور شہدا پر نوحہ کناں تھیں ۔

دشمنان اہل بیت نے خواتین کو خیموں سے باہر نکال دیا اور خیموں میں آگ لگا دی ، خواتین سر برہنہ اور پا برہنہ نوحہ کناں خیموں سے باہر آئیں انہیں اسیر کیا گیا ، انہوں نے کہا کہ تمہیں خدا کا واسطہ ہمیں مقتل حسین ؑ تک لے چلو وہ انہیں لے گئے اور جیسے ہی خواتین کی نظر مقتولین کے پاک جسموں پر پڑی انہوں نے نالہ و شیون بلند کیا ۔

راوی کہتا ہے : خدا کی قسم مجھے یاد ہے کہ زینب بنت علی ؑ نے غم ناک اور دل سوز آواز میں امام حسین ؑ پر گریہ کیا اور آواز دی :

اے محمد آپ پر آسمانی فرشتے درود بھیجتے ہیں اور یہ حسین ؑ ہے جو خاک و خون میں غلطاں اور اعضائے بدن کے ٹکڑے ٹکڑے ہوئے صورت میں زمین کربلا پر پڑا ہے یہ آپ کی بیٹیاں ہیں جو اسیر ہیں میں پیش پروردگار اس کی شکایت کروں گی اور محمد مصطفی ، علی مرتضی ، فاطمہ زہرا اور حمزہ سید الشہدا علیہم السلام سے اس کی شکایت کروں گی ۔ اے محمد یہ حسین ؑ خاک پر پڑا ہے اور بیاباں کی ہوا اس پر خاک ڈال رہی ہے جو زنا زادوں کے ہاتھوں قتل ہوا ہے ۔ آہ کیسا غم کتنی بڑی مصیبت آج میں اپنے رسول کی وفات کا احساس کررہی ہوں ۔ اے اصحاب محمد یہ خاندان مصطفی ؐہیں جو اسیر ہوئے ہیں ۔

روای کہتا ہے کہ خدا کی قسم دوست اور دشمن سب رو پڑے پھر سکینہ نے اپنے باپ کو اپنے آغوش میں لیا کچھ عرب آئے اور انہوں نے اس بچی کو باپ کے جنازہ سے جدا کردیا ۔



منابع: لھوف
ارسال کننده: مدیر پورتال
 عضویت در کانال آموزش و فرهنگ اربعین

چاپ

برچسب ها خیام حسینی کی غارتگری. عصر عاشور۔ خیام۔ خیمے لٹے ہوئے خیمے۔ کربلا۔ امام حسین

نظرات


ارسال نظر


Arbaeentitr

 فعالیت ها و برنامه ها

 احادیث

 ادعیه و زیارات