ستاد مرکزی اربعین|کمیته فرهنگی، آموزشی

banner-img banner-img-en
logo

 ادبیات و پژوهش


شہادت حضرت حنظلہؑ

چاپ
شہادت حضرت حنظلہؑ

جناب جون کے بعد حنظلہ بن اسد شامی جنگ کے لئے تیار ہوئے اور امام حسین ؑ کے مقابل کھڑے ہوئے اور اپنے چہرے اور سینے کو ان برستے تیروں کے مقابل کیا اور جو بھی نیزے ، تلواریں امام کے سامنے آتیں ان کے سامنے سپر ہوتے اور بلند آواز میں سورہ غافر کی ۳۰ تا ۳۳ آیات کی تلاوت کرتے جس میں مومن آل فرعون نے فرعونیوں کو مخاطب کرکے کہا تھا :

يا قَوْمِ إِنِّي أَخافُ عَلَيْكُمْ مِثْلَ يَوْمِ الْأَحْزابِ مِثْلَ دَأْبِ قَوْمِ نُوحٍ وَ عادٍ وَ ثَمُودَ وَ الَّذِينَ مِنْ بَعْدِهِمْ وَ مَا اللَّهُ يُرِيدُ ظُلْماً لِلْعِبادِ وَ يا قَوْمِ إِنِّي أَخافُ عَلَيْكُمْ يَوْمَ التَّنادِ يَوْمَ تُوَلُّونَ مُدْبِرِينَ ما لَكُمْ مِنَ اللَّهِ مِنْ عاصِمٍ

اے میری قوم والو یقینا میں تمہارے سلسلہ میں خوفزدہ ہوں اس عذاب سے جو روز احزاب کی طرح ہے اور اس عذاب کی مانند جو قوم نوح و عاد و ثمود اور ان کے بعد کی قوموں کے لئے تھا یقینا خدا اپنے بندوں کے سلسلہ میں ظالم نہیں ہے ۔ نیز میں بھی تمہارے سلسلہ میں خائف ہوں روز قیامت کے سلسلہ میں وہ دن جس دن لوگوں کی آہ و فریاد ہر طرف سے بلند ہوگی ، جس دن عذاب سے بھاگو گے لیکن خدا کی جانب سے کوئی محافظ نہیں پاؤگے ۔

اے لوگو حسین ؑ کو قتل نہ کرو کیونکہ اس عمل کے مقابل عذاب الہی ہے جس کے سبب رسوا ہوگے اور اس نقصان دیدہ کے مانند ہوگے جس نے خدا پر جھوٹا الزام لگایا ۔

پھر امام حسین ؑ کی جانب رخ کیا اور عرض کیا۔ کیا میں اپنے پروردگار کی جانب نہ جاوں اور اپنے بھائیوں کی صف میں کھڑا نہ ہوں؟

امام نے فرمایا: ہاں جاؤ۔اس جانب جس میں تمہاری دنیا و آخرت کے لئے بہتر ہے جاو اس حکومت کی جانب جس کے لئے فنا اور زوال نہیں ہے ۔

اس کے بعد انہوں نے میدان جنگ میں قدم رکھا ، دلیرانہ جنگ کی مشکلات پر صبر کیا یہاں تک کہ شہید ہوگئے ۔



منابع: لھوف
ارسال کننده: مدیر پورتال
 عضویت در کانال آموزش و فرهنگ اربعین

چاپ

برچسب ها شہادت حضرت حنظلہ۔ امام حسین۔ کربلا

نظرات


ارسال نظر


Arbaeentitr

 فعالیت ها و برنامه ها

 احادیث

 ادعیه و زیارات