ستاد مرکزی اربعین|کمیته فرهنگی، آموزشی

banner-img banner-img-en
logo

 ادبیات و پژوهش


مکہ کی جانب امام حسین ؑ کا سفر

چاپ
مکہ کی جانب امام حسین ؑ کا سفر

صبح کے وقت امام حسین ؑ مکہ کی جانب نکلے اور تین شعبان ۶۰ہجری کو مکہ پہونچے ماہ شعبان سے لے کر ماہ ذی القعدہ تک مکہ میں تھے ، عبد اللہ بن عباس اور عبد اللہ بن زبیر آپ کی خدمت میں آئے اور کہا کہ یزید کی بیعت کرلیجئے ۔ امام نے جواب دیا : رسول نے جو حکم دیا ہے اس پر عمل کروں گا ۔ جب ابن عباس نے یہ جملہ سنا ، امام حسین ؑ کے پاس سے اٹھے اور یہ کہتے ہوئے اٹھے وا حسینا ، اس کے بعد عبد اللہ بن عمر نے یہ تجویز پیش کی کہ امام گمراہوں کے ہمراہ ہوجائیں تاکہ جنگ اور خونریزی سے دور ہوں ۔ امام نے فرمایا:

اے ابا عبد الرحمن کیا تم نہیں جانتے کہ دنیا اللہ کی نظر میں کتنی پست اور ذلیل ہے کہ جب یحی بن زکریا کے سر کو کاٹ کر بنی اسرائیل کے زنا زادوں نے ایک زنا زادہ حاکم کے پاس بھیجا تھا تو کیا تم نہیں جانتے کہ بنی اسرائیل نے طلوع صبح سے طلوع آفتاب کے درمیان ستر انبیاء کا قتل کیا تھا اور اس کے بعد بازاروں میں بیٹھ کر نہایت سکون کے ساتھ خرید و فروخت کررہے تھے گویا انہوں نے کوئی عمل ہی انجام نہیں دیا  اس کے باوجود خدا نے ان کے عذاب میں جلدی نہیں کی اور اس کے برخلاف انہیں مہلت دی اور اس کے بعد انہیں انتقام جوئی کے تحت عذاب سے دوچار کیا اے عبد الرحمن خدا سے ڈرو اور میری مدد سے دور نہ جاؤ۔



منابع: لھوف
ارسال کننده: مدیر پورتال
 عضویت در کانال آموزش و فرهنگ اربعین

چاپ

برچسب ها سفر۔ امام حسین۔ مکہ۔

نظرات


ارسال نظر


Arbaeentitr

 فعالیت ها و برنامه ها

 احادیث

 ادعیه و زیارات