ستاد مرکزی اربعین|کمیته فرهنگی، آموزشی

banner-img banner-img-en
logo

 ادبیات و پژوهش


پانچ دلیلیں جو امام حسین(ع) کے چہلم کو ممتاز بناتی ہیں

چاپ
پانچ دلیلیں جو امام حسین(ع) کے چہلم کو ممتاز بناتی ہیں

پانچ دلیلیں جو امام حسین(ع) کے چہلم کو ممتاز بناتی ہیں

 ممکن ہے کہ بعض لوگوں کے ذہن میں یہ سوال پیدا ہوا ہو کہ کس طرح رسول اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم اس کے باوجود کہ خاتم النبیین ہیں،یا حضرت علی علیہ السلام کہ اسلام میں جن کے کارنامے اس قدر ،عظیم ہیں ،ان کا چہلم نہیں منایا جاتا لیکن حضرت سید الشہداء علیہ السلام کی چہلم کی زیارت کی خود حضرات معصومین علیھم السلام نے سفارش بلکہ زبر دست تاکید کی ہے ،یہاں تک کہ مومن کی ایک صفت چہلم کی زیارت کو قرار دیا گیا ہے ۔

عالمی اردو خبررساں ادارے نیوزنورنے چہلم کے منعقد کرنے کی متعدد دلیلیں پیش کی ہیں کہ جن میں سے بعض کی طرف اشارہ کیا جاتا ہے :

۱ ۔ امام حسین علیہ السلام کی فداکاریوں کااسلام کو نئی زندگی دینے میں بہت روشن کردار رہا ہے ،عاشوراء اور چہلم کی یاد کو زندہ رکھنا اور ان کی تعظیم کرنا  حقیقت میں دین اسلام کو زندہ رکھنا اور  دین کے دشمنوں کے ساتھ مبارزہ  کرنا ہے ،چونکہ آنحضرت نے اپنے خون سے دین اسلام کو نئی زندگی بخشی تھی ۔

۲ ۔ وہ مصیبت کہ جس کا سامنا حضرت امام حسین علیہ السلام نے کیا اس طرح کی مصیبت کا سامنا کسی امام یا پیغمبر کو نہیں کرنا پڑا ۔امام علیہ السلام کی مصیبت سب سے بڑی اور سخت مصیبت تھی ،اگر کوئی عامل نہ بھی ہوتا تب بھی یہی عامل کافی تھا کہ کیوں دوسرے اماموں اور پیغمبر اکرم صلی اللہ رلیہ و آلہ و سلم سے زیادہ سید الشہداء علیہ السلام کی عزاداری مناتے ہیں اور ان کے لیے متعدد مجالس برپا کرتے ہیں ۔

۳ ۔ ظاغوتی جلادوں نے محرم ۶۱ ہجری میں حسین ابن علی علیھما السلام ،ان کی اولاد ۔اور آنحضرت کے اعزاء و اقرباء کو شہید کیا اور کربلاء کے اسیروں کو کوفہ اور شام لے گئے ،یہ دکھی اور داغدیدہ قیدی امام حسین علیہ السلام اور آنحضرت کے ساتھیوں کے چہلم کے دن کربلاء پہنچے اور عاشوراء کے تمام مصائب اس روز تازہ ہو گئے ،چنانچہ وہ دن خاندان پیغمبر ص کے لیے بہت سخت دن کہلایا ۔

۴ ۔ امام حسین علیہ السلام کو شہید کرنے سے دشمنان اسلام کا مقصد دین اسلام کو مٹانا تھا ۔دشمنوں نے کوشش کی تھی کہ واقعہء کربلاء کو  بالکل بھلا دیا جائے ،اسی لیے جو لوگ سید الشہداء علیہ السلام کی زیارت کے لیے جاتے تھے ،بسا اوقات ان کو پکڑ کر ستاتے تھے ،یا قتل کر دیتے تھے ۔

متوکل عباسی کے زمانے میں کربلاء میں تمام قبروں کے اوپر ہل چلا کر ان کو کھیت میں تبدیل کر دیا گیا تھا ،اور لوگوں کو امام حسین علیہ السلام کی قبر کی زیارت سے منع کر دیا گیا تھا ۔شیعہ اس سازش کا مقابلہ کرنے کے لیے ہر مناسبت پر حضرت کی زیارت کے لیے جاتے تھے ،کہ جن میں سے ایک مناسبت چہلم کا دن تھا ۔

۵ ۔ مومن کی ایک علامت چہلم کے دن امام حسین علیہ السلام کی زیارت ہے ،امام حسن عسکری علیہ السلام سے روایت کی گئی ہے کہ مومن کی نشانیاں پانچ چیزیں ہیں شب و روز میں ۵۱ رکعت نماز فریضہ اور نافلہ ،چہلم کی زیارت ، دائیں ہاتھ میں انگوٹھی پہننا ، سجدہ میں خاک پر پیشانی رکھنا اور بلند آواز سے بسم اللہ کہنا (۱)

دنیا کے شیعوں کے گیارہویں پیشوا نے اس روایت شریف میں مومن کی ایک صفت چہلم کے دن امام حسین علیہ السلام کی زیارت کو قرار دیا ہے ۔

 



منابع: نیوزنور۔۔) مفاتیح الجنان ص ۵۴۵ ماہ صفر کے اعمال ، بیس صفر۔
ارسال کننده: مدیر پورتال
 عضویت در کانال آموزش و فرهنگ اربعین

چاپ

برچسب ها امام حسین علیہ السلام کا چہلم۔ چہلم امام حسین علیہ السلام کا امتیاز۔ پانچ دلیلیں اربعین امام حسین کے سلسلہ میں۔ امام حسین۔ کربلا۔ چہلم۔

نظرات


ارسال نظر


Arbaeentitr

 فعالیت ها و برنامه ها

 احادیث

 ادعیه و زیارات